کبوتروں کا رزلٹڈ بریڈر جوڑا کیسے لگایا جائے Pigeons Breeding Technique

پیجن بریٍڈنگ تکنیک

ہر کبوتر پرور کی یہ دلی خواہش ہوتی ہے کہ. اس کے پاس کبوتروں کے اس طرح کے بریڈر جوڑے ہوں. کہ جن کے بچے اچھی پرواز بھی کریں. اور سیان کی خصوصیات بھی ان میں بدرجہ اتم موجود ہوں. مطلب بچوں کو جب اڑایا جائے تو وہ کسی اور جگہ جا کر نہ بیٹھ جائیں بلکہ اڑ کے واپس گھر آئیں. آج کا ہمارا یہ آرٹیکل Pigeons Breeding Technique کے بارے میں ہے. کہ کس طرح ہم اپنے کبوتروں میں سے میل اور فی میل کبوتر سلیکٹ کر کے. ان کا جوڑا لگائیں کہ جن کے بچے پرواز اور سیان کی بے پناہ خصوصیات کے حامل ہوں. اور ایک رزلٹڈ جوڑا لگانے کے لئے نر اور مادہ کبوتر میں کون کون سی خوبیوں کا ہونا ضروری ہے

پیجن بریڈنگ ایک فن ہے

دوستو پیجن بریڈنگ Pigeon Breeding ایک علم اور فن ہے. جس میں مہارت کے لئے کبوتر پرور کا کبوترپروری کے اسرارورموز سے واقف ہونا بے حد ضروری ہے. ضروری ہےکہ آپ کو یہ علم ہو کہ ایک اچھا کبوتر کس طرح کا ہوتا ہے. کبوتر کی آنکھ پرجوڑہڈی دم اور پنجوں کی خوبیوں اور خامیوں کا علم ہو. کبوتروں کی مختلف نسلوں میں موجود خوبیوں اور خامیوں سے واقفیت حاصل ہو. آپ اگر نسل یا رنگ دیکھ کر ایک جوڑا لگاتے ہیں. تو آپ کبھی بھی اچھا رزلٹ حاصل کرنے میں کامیاب نہیں‌ہو سکتے. کیونکہ ہر نسل میں اچھے برے کبوتر موجود ہوتے ہیں. ایک کبوتر اپنی نسل میں تو خالص ہو سکتا ہے. لیکن یہ ضروری نہیں کہ وہ اچھا بھی ہو

اچھے کبوتر کی پرکھ

اگر آپ کو یہ علم ہے کہ ایک اچھے کبوتر کی جسمانی ساخت کس طرح کی ہوتی ہے. مزید ذاتی طور پر بھی آپ اس کبوتر کی خوبیوں اور خامیوں کو جانتے ہوں. مطلب ہر طرح سے آپ نے اس کبوتر کو پرکھا ہوا ہو. آپ یہ بھی جانتے ہوں کہ کبوتروں کی مختلف نسلوں‌میں کون کون سے پلس یا مائنس پوائنٹ ہیں. توپھر آپ اپنے علم اور تجربے اور پرکھ کی بدولت نر اور مادہ کبوتر کو سلیکٹ کر کے ایک پرفیکٹ بریڈر جوڑا Breeder Pigeons Pair لگا سکتے ہیں کہ جو آپ کی خواہش کے مطابق رزلٹ فراہم کرے.مطلب جس مقصد کے لئے بھی آپ نے وہ بریڈر جوڑا لگایا ہے اسے پورا کرے

بریڈر بےبی پیجنز

پیجن بریڈنگ Pigeon Breeding کرواتے وقت جب آپ جوڑا لگاتے ہیں. اور نر کبوتر اور مادہ کبوتر کو سلیکٹ کرتے ہیں.تو اس کا انحصار اس بات پر بھی ہوتا ہے. کہ آپ کبوتروں کا مذکورہ جوڑا کس مقصد کے لئے لگا رہے ہیں. اگر کبوتروں کا جوڑا لگاتے وقت آپ کے پیشِ نظر یہ چیز ہے کہ .ان سے حاصل ہونے والے بچے بڑے ہو کر خود بھی اچھے بریڈر بنیں. تو پھر آپ نر اور مادہ میں ایک اچھے بریڈر کبوتر کی جسمانی خوبیوں کے ساتھ ساتھ. ان خوبیوں کا تذکرہ ہم آرٹیکل میں آگے چل کر کریں گے. یہ بھی دیکھیں گے کہ ان دونوں کی آنکھ میں تل کر گرد موجود پہلا دائرہ مکمل اور واضح ہو. جسے ہم بریڈنگ رنگ بھی کہتے ہیں

فلائیر بےبی پیجنز

لیکن اس کے برعکس اگر کبوتروں کا ایک بریڈر جوڑا Pigeons Breeder Pair لگاتے وقت. آپ کا مقصد اچھے پروازی بچے حاصل کرنا ہے. تو آپ کو میل اور فیمیل کبوتر کو سلیکٹ کرتے وقت ان میں ایک اچھے بریڈر کبوتر والی دیگر خصوصیات کے ساتھ ساتھ . ایک کی آنکھ میں تل کے گرد موجود دائرہ مکمل اور واضح جبکہ دوسرے میں کم واضح بریڈنگ رنگ رکھنا پڑے گا. یاد رہے ایک اچھا بریڈر جوڑا لگاتے وقت جب ہم کبوتر کی دیگر جسمانی خوبیوں کو دیکھتے ہیں. وہاں کبوتر کی آنکھ میں موجود خصوصیات بھی بے حد اہم کردار ادا کرتی ہیں

کسی کبوتر کی خامی کو پورا کرنا

بعض اوقات آپ پیجن بریڈنگ Pigeon Breeding کرواتے وقت جب ایک جوڑا لگاتے ہیں. تو آپ کا ایک کبوتر باقی ہر طرح سے پورا ہوتا ہے. لیکن اس میں کوئی ایک کمی ہوتی ہے. آپ نے اسے جوڑے میں بھی ڈالنا ہوتا ہے. تو اس طرح کی صورتِ حال میں اس جوڑے کے لئے جو دوسرا کبوتر آپ سلیکٹ کرتے ہیں. وہ ایسا ہوتا ہے جو پہلے کبوتر کی اس کمی کو پورا کر دے. مثال کے طور پر آپ کے پاس ایک ایسا نر ہے جو کہ سیان کی بہت اچھی خصوصیات کا حامل ہے. لیکن اس میں پرواز کم ہے. تو اس نر کے لئے آپ جس مادی کا انتخاب کریں گے. وہ ایسی ہونی چاہئے جو پرواز کی بے پناہ صلاحیت کی مالک ہو. تاکہ نر کی پرواز میں کمی والی خامی کو مادہ اپنی پروازی صلاحیت کی بدولت پورا کردے

کبوتر کی جسمانی خامی کو دور کرنا

بالکل یہی طریقہ کار ہم اس وقت بھی اختیار کر سکتے ہیں. جب ہم پیجن بریڈنگ Pigeon Breeding کے لئے اپنے سلیکٹ کئے ہوئے کسی کبوتر کی جسمانی کمی کو پورا کرنا چاہتے ہوں. مثال کے طور پر ہمارے پاس اگر نر چھوٹی ہڈی کا ہے. تو پھر ایسی صورت میں‌ہم جس مادہ کا اس کے لئے انتخاب کریں گے. وہ بڑی ہڈی کی ہوگی. تاکہ نر کی جو جسمانی کمی ہے ان کے بچوں میں وہ کمی نہ آئے. اسی طرح اگر ہمارے پاس جوڑا لگاتے وقت مادی بڑے جسم کی ہے تو ہم اس کے لئے جو نر سلیکٹ کریں گے وہ چھوٹے جسم کا ہوگا. تاکہ ان کے بچوں کی جسمانی ساخت پرفیکٹ رہے

اچھے بریڈر کبوتر کی خصوصیات

اب ہم دیکھتے ہیں کہ ایک اچھا اور رزلٹڈ بریڈر جوڑا لگانے کے لئے میل اور فی میل مطلب نر اور مادہ میں کون کون سی خوبیاں ہونی چاہئے. اس میں ہم جوڑے کے لئے منتخب کئے گئے کبوتروں کی جسمانی ساخت کے بارے میں بھی بات کریں گے اور یہ بھی دیکھیں گے کہ ان کبوتروں کی آنکھیں کونسی خصوصیات کی حامل ہونی چاہئے

کبوتر کا جسم اور ہڈی

کبوتر جس بھی رنگ یا نسل میں ہے. سب سے پہلے اس کا جسم دیکھیں. کبوتر کا جسم سخت ہو. مطلب کبوتر بڑی مضبوط اور کھڑی ہڈی کا ہو.ہڈی کشتی نما شکل میں ہو. ہاتھ میں کبوتر کو پکڑیں تو ہڈی چبھتی ہوئی محسوس ہو. اور ہڈی کی لمبائی کم از کم چار انگلیوں کے برابر ہو.ایک اچھے بریڈر کبوتر کا جوڑ بالکل بند اور ہڈی کے ساتھ ملا ہوا ہو. لیکن مادہ مطلب فیمیل کبوتر کا جوڑ تھوڑا کھلا ہونا بہتر ہے. ہڈی اور جوڑ سخت ہونے کے بعد کبوتر ریشم کی طرح نرم و ملائم ہو. اور جب آپ اسے ہاتھ میں پکڑیں. تو یہ احساس ہو کہ کبوتر ابھی ہاتھ سے پھسل کے نکل جائے گا

چھاتی دُم گردن چونچ پنجے اور ناخن

کبوتر کی چھاتی چوڑی اور کشادہ ہو. جبکہ کبوتر کی دم چھوٹی بند اور ایک پر کی ہو. دم کے اوپر گوشت کم ہو. اور دم کا آخری حصہ گھوڑے کی نعل کی مانند ہو. کبوتر کے کندھے باریک مضبوط اور اوپر کی جانب اٹھے ہوئے ہوں. اور ان پے گوشت زیادہ نہ ہو. کبوتر کی گردن لمبی اور باریک ہو. چونچ سخت اور لمبی ہو. ماتھا چونچ کے برابر ہو. کبوتر کے پنجے گہرے سرخ خشک انگلیاں باریک لمبی اور ان پے گوشت نہ ہونے کے برابر ہو. کبوتروں کی مختلف نسلوں میں چونچ اور ناخن مختلف رنگوں میں‌ہوتے ہیں.چونچ اور ناخن جیسے بھی ہوں لیکن ایک رنگ میں ہوں

کبوتر کا پر

کبوتر کے پر چمکدار مضبوط ہوں. ان میں لچک اور ملائمیت ہو. پر کی تیلی باریک اور لچکدار ہو. پر باریک یا چوڑا جو بھی آپ کی پسند ہو. لیکن پروں کی شیپ تلوار کی مانند ہو. پروں میں‌گیپ نہ ہو. بغل کے پر بڑے ہوں. اور جسم کے ساتھ ملے ہوئے ہوں. پر کھولنے پر ایک لائین میں ہوں. اور شاہ پروں کا جھکائو اندر کی طرف ہو. آٹھواں نواں اور دسواں پر ایک جیسے ہوں تو زبردست ہے. ورنہ آٹھوان پر نویں اور دسویں پر سے تھوڑا سا بڑا ہو

کبوتر کی آنکھ

کبوتر کی آنکھ سائز میں بڑی کھلی گول روشن چمکدار نمدار اور بلب کی مانند باہر کی طرف ابھری ہوئی ہو. آنکھ کا تل باریک ہو. بیضوی شکل اور اسکا جھکائو چونچ کی جانب ہو تو بہتر ہے. تل کے گرد چاہے جس رنگ میں بھی ہو. ایک مکمل اور واضح دائرہ ایک اچھے بریڈر کبوتر کے لئے بے حد ضروری ہے. کبوتروں کی مختلف نسلوں میں آنکھ کی زمین اور ذرات کا رنگ مختلف ہوتا ہے. ایک اچھے بریڈر کبوتر کے لئے آنکھ کے بالکل آخری حصے میں‌. ہیلتھ رنگ کا ہونا بھی بے حد ضروری ہے

نر اور مادہ کبوتر کی عمر میں فرق

جوڑا لگاتے وقت نر کبوتر ہمیشہ بڑی عمر کا لیں اور مادہ کی عمر تھوڑی کم ہو. کبوتر میں اگر تھوڑی بہت کمی رہ جائے تو ٹھیک لیکن مادہ ہر لحاظ سے پرفیکٹ سلیکٹ کریں. جوڑا لگانے سے قبل نر اور مادہ کی ڈی وورمنگ اور ویکسی نیشن ضرور کر لیں. تاکہ اگر ان میں کوئی مسئلہ ہے تو وہ بچوں میں منتقل نہ ہو. نر اور مادہ کا جوڑہ لگا کر ان سے دو یا تین جھول بچوں کی لے کر جوڑا کچھ عرصہ کے لئے توڑ دیں. کیونکہ مسلسل بچے نکلوانے سے کبوتروں کے جینز میں کمی ہو جاتی ہے. جو پھر بچوں کی کارکردگی پے اثر انداز ہوتی ہے

کبوتراورکبوتری کی جسمانی ساخت میں فرق

کبوتروں کا جوڑہ لگاتے وقت نر اور مادہ کی جسمانی ساخت میں فرق رکھیں. نراگر بڑے جسم کا ہے تو اس کے ساتھ چھوٹے جسم کی مادہ کو جوڑے میں ڈالیں. اور اگر مادہ بڑی جسمانی ساخت کی ہو تو اس کے ساتھ ایسا نر لگائیں جو جسم میں چھوٹا یا درمیانے سائز کا ہو. بالکل اسی طرح جوڑا لگاتے وقت نر اور مادہ کبوتر کے پروں کی ساخت میں بھی فرق رکھیں. مثال کے طور پر نر کبوتر کے پراگر چوڑے ہیں تو اس کے لئے جو مادہ سلیکٹ کرتے ہیں وہ ایسی ہو کہ جو تیز یا نوکیلے پروں کی ھو. یا پھر دوسری صورت میں آپ اس کے برعکس کر سکتے ہیں.

آپ کے پاس موجود جن میل اور فیمیل کبوتروں میں یہ خصوصیات موجود ہوں.ان کو مندرجہ بالا ہدایات کو ذھن میں رکھتے ہوئے جوڑے لگائیں. انشاء اللہ آپ کو اپنی توقع سے بڑھ کر رزلٹ ملے گا. ان جوڑے کے بچے نہ صرف پرواز میں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کریں گے بلکہ سیان کے بھی ماسٹر ہونگے.

Leave a Comment